امین گڑھ کا سکول بنیادی سہولیات سے محروم

رحیم یارخان جنوبی پنجاب کے سکولوں کے ساتھ سوتیلی ماں جیسا سلوک کیوں پاکستان تحریک انصاف کی حکومت کے ہوتے ہوئے بھی دس سال قبل تعمیر ہونے والے سکول کو انصاف نہ مل سکا یونین کونسل امین گڑھ کی بستی رئیس محمود بخش کھوکھراں کا گورنمنٹ گرلز پرائمری سکول بنیادی سہولتوں سے محروم چھوٹے چھوٹے بچے زمین پر بیٹھ کر تعلیم حاصل کرنے پر مجبور علاقہ مکینوں کا سکول فعال نہ ہونے پر شدید احتجاج ان کا کہنا تھا کہ سکول کو بنے ہوئے دس سال بیت گئے ہیں پہلے نو سال تو سکول بھوت بنگلہ بنا رہا جس کے بعد ایک سال ہوگیا ہے سکول کو چلایا گیا ہے مگر کوئی بنیادی سہولت میسر نہیں کی گئی سکول کی سیکورٹی نہیں ہے سکول کے دروازے اورکھڑکیوں کے شیشے نہیں ہیں اور سیوریج کا بھی کوئی انتظام نہیں ہے کیا ہمارے بچے پاکستان کے بچے نہیں ہیں حالانکہ سکول میں ایک سے ڈیڑھ سو کے قریب بچے حصول تعلیم کے لیے آتے ہیں اور اتنی ہی تعداد یہاں سے سفر کرکے دور دراز کے سکولوں میں تعلیم کے لیے جاتے ہیں انہوں نے ڈی سی رحیم یارخان وزیراعلی پنجاب وزیر تعلیم اور وزیراعظم پاکستان سے سکول کا نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے تاکہ ہمارے بچے بھی معیاری تعلیم حاصل کر سکیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Translate »
Close
Close