تھر پارکر کے متاثرین کے لیے امدادی سامان کی بڑی کھیپ روانہ کر دی گئی

جماعتہ الدعواہ کے رفاہی ادارے فلاح انسانیت فاونڈیشن رحیم یار خان کی جانب سے تھر پارکر کے متاثرین کے لیے امدادی سامان کی بڑی کھیپ روانہ کر دی گئی۔امدادی سامان میں 200خاندانوں کے لیے خشک راشن،1200 بچوں کے جوتے، 400 گرم سوٹ، 100 کمبل، 50 بستر، 800 مردانہ جیکٹ جبکہ 2000 سے زائد مریضوں کے لیے ادویات شامل ہیں۔ امدادی سامان کی کل مالیت 15 لاکھ ہے. قافلے کے ساتھ دس رکنی میڈیکل ٹیم بھی روانہ کی گئی ہے جو تھر پارکر کے متاثرہ علاقوں میں میڈیکل کیمپ لگائے گی۔امدادی سامان روانہ کرتے ہوئے فلاحِ انسانیت فاؤنڈیشن کے مرکزی راہنما نوید قمر کا کہنا تھا کہ رحیم یار خان سے تھرپارکر کے قحط سے متاثرہ 200 خاندانوں کے لیے 10 لاکھ روپے کاخشک راشن اور ملبوسات روانہ کر دیے ہیں۔ اس موقع پر جماعتہ الدعوہ رحیم یار خان کے راہنما قاری محمد افضل اور مظفر رضا بھی موجود تھے۔ نوید قمر نے کہا کہ اس وقت تھرپارکر میں بارشیں نہ ہونے کی وجہ سے قحط کی صورتحال ہے۔لوگ نقل مکانی کر نے پر مجبور ہیں۔اپنے جانوروں و دیگر سازوسامان سمیت علاقہ چھوڑ رہے ہیں۔5 سو سے زائد بچے خوراک کی کمی اور ادویات نہ ملنے کے باعث فوت ہو چکے ہیں۔چارہ نہ ہونے کی وجہ سے جانور مر رہے ہیں۔اس مشکل ترین صورتحال میں جماعتہ الدعوہ کے رفاہی ادارے فلاح انسانیت فاؤنڈیشن نے امدادی آپریشن کا آغاز کر دیا ہے۔رحیم یار خان سے امدادی سامان کی بڑی کھیپ روانہ کر دی ہے۔امدادی سامان میں خشک راشن میں آٹا، چاول، گھی، چینی، دالیں و دیگر اشیائجبکہ سردیوں میں استعمال کیلئے گرم بستر، گفٹ آئٹم اور دو ہزار خواتین اور بچوں کیلئے کپڑے اور جوتے شامل ہیں. مزید انہوں نے رحیم یار خان کے عوام کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ رحیم یار خان کے عوام کے اعتماد اور تعاون پر مشکور ہیں۔انہوں نے کہا کہ ایف آئی ایف تھرپارکر سندھ میں سولر سسٹم کے ذریعہ ٹیوب ویل چلا رہی ہے۔ جہاں ریت اڑتی تھی وہاں کھیت آباد اور فصلیں اگ رہی ہیں۔ اب تک 2800 پانی کے منصوبہ جات مکمل کئے جا چکے ہیں جس میں رحیم یار خان کا تعاون نمایاں ہے۔ جن سے لاکھوں مسلم و غیر مسلم آبا دی مستفید ہو رہی ہے۔ تھر پارکر میں مستقل طور پر علاج معالجہ کی سہولیات کے لئے دو ہسپتال زیر تعمیر ہیں۔انہوں نے کہا کہ کمزوروں،مریضوں اور دکھی انسانیت کی خدمت کرنا سنت نبویﷺ ہے۔فلاح انسانیت فاؤنڈیشن کا یہ شیوہ رہا ہے کہ وہ سب سے پہلے متاثرین تک پہنچ کر اپنی خدمات مہیا کرتی ہے خدمت و محبت کا سلسلہ جاری رہے گا۔ہمیں پریشانی اور مصیبت کے ان لمحات میں متاثرین کو فراموش نہیں کرنا چاہیے۔دکھی انسانیت کی خدمت سے معاشرتی ناہمواری کا خاتمہ کیا جا سکتا ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ ہم خدمت خلق کا کام رضائے الہی کے حصول کے لیے کر رہے ہیں۔خدمت خلق کا حکم بھی دین اسلام میں ہے۔انسانیت کی فلاح کے لیے کام کرنے والے ہمیشہ کامیاب ہوتے ہیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Translate »