fbpx

اعظم پٹواری کو بچانے کے لیے تحصیلدار اور اے سی دفتر کا عملہ متحرک

رحیم یارخان :لیاقت پور : اعظم پٹواری کو بچانے کے لیے تحصیلدار اور اے سی دفتر کا عملہ متحرک،اسسٹنٹ کمشنر لیاقت پور کو چکمہ دینے کی تیاریاں مکمل،اعظم کے حق میں رپورٹ لکھوانے کے لیے کرپٹ مافیا متحرک،ابھی تک انتقالات کینسل کیے گئے نہ اعظم پٹواری کے خلاف رپورٹ تیار کی گئی،

ذرائع کے مطابق اعظم پٹواری نے تحصیلدار اور اسسٹنٹ کمشنر آفس کے ملازمین کو 10لاکھ روپے دے دئیے کہ میرے خلاف کاروائی نہ ہونے دو،ذرائع کے مطابق ٹاؤنوں کے غیر قانونی انتقالات سے ڈی جی معظم سپرااور سینئر ممبر بورڈ آف ریونیوپنجاب کو ایک کروڑروپے رشوت کے دئیے گئے،

اعظم پٹواری نے لیاقت پورکا 50ایکڑکمرشل رقبہ کی حیثیت تبدیل کرڈالی،اعظم پٹواری تحصیلداراور گرداوربھی ملوث،پٹواری اعظم کی فراڈ بازیاں منظر عام پر آگئیں، متعدد ہاؤسنگ سکیموں کی قیمتی کمرشل اراضی کو زرعی بنا کر سرکاری خزانہ کو اربوں روپے کا ٹیکہ لگا دیا۔

 اعظم پٹواری کے خلاف کاروائی تو کردی گئی لیکن اسکو بچانے کے لیے انکے حق میں رپورٹ اسسٹنٹ کمشنر لیاقت پور سے لکھوانے لیے تحصیلدار،گردوار اور اے سی آفس کا عملہ اسسٹنٹ کمشنر لیاقت پور کو چکمہ دینے کے لیے مضبوط حکمت عملی تیار کرلی ہے ابھی تک انتقالات کینسل نہ کیے گئے ہیں اور نہ ہی اعظم پٹواری کے خلاف کوئی رپورٹ ڈپٹی کمشنر رحیم یارخان کو بھیجی گئی ہے

لیاقت پور شہر کے گردونواح میں موجود ہاؤسنگ اسکیمیں خیابان خورشید ٹاون۔علی حسن ٹاون۔ رحیم ٹاون اور علی حسن فیز 2 کا تمام کمرشل رقبہ اعظم پٹواری نے گرداور اور تحصیلدار سے مل کر کروڑوں روپے کا ذاتی مفاد حاصل کرکے زرعی بنادیا اور قانون کو جوتی کی نوک پر رکھتے ہوئے 5مرلے سے 20مرلے تک انتقالات کردئیے

جس میں شہر کے کئی دولت مند اور سیاسی اثر ورسوخ کے حامل افراد نے 5 مرلہ سے لے کر ایک کنال تک کے پلاٹ حاصل کر کے اپنی عالیٰ شان کوٹھیاں اور پلازے تعمیر کر لئے ہیں مگر پٹواری بادشاہ اعظم نے مبینہ طور پر اسسٹنٹ کمشنر لیاقت پورآفس کے منظور نظر سے مبینہ گٹھ جوڑ کر کے ان قیمتی پلاٹس کو زرعی شو کر کے مبینہ طور پر 15 ہزار روپے فی مرلہ کے حساب سے صرف 13۔ 14 سو روپے ٹیکس ادا کرکے 50 ایکٹر کے قریب اس کمرشل جگہ کو زرعی ظاہر کر کے ان کے انتقالات کرا کے قومی خزانہ کو اربوں روپے کا نقصان پہنچا دیا جبکہ وہ خود اور اے۔ڈی۔ایل آر مبینہ طور پر کرڑوں میں کھیلنے لگے۔ شہریوں نے چیئرمین نیب پاکستان اور ڈی جی اینٹی کرپشن پنجاب سے لیاقت پور شہر کی تمام ہاوسنگ سکیموں کی سپشل تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Translate »