لیاقت پور

Liaquatpur Rahim Yar khan
لیاقت پور

لیاقت پور کا شہر لاہور کراچی مین ریلوے لائن پر رحیم یار خان کے شمال مشرق میں 90 کلومیٹر کے فاصلے پر واقع ہے۔ ماضی میں یہ قصبہ صرف کچی منڈی کے چھوٹے سے علاقے پر مشتمل تھااور یہاں چار دروازوں والی چُودری تھی۔ جس کی وجہ سے اس کا نام چودری رکھا گیا
یہ چُودری اس لیے تعمیر کی گئی تھی کہ اس راستے سے گزر کر جانے والے قافلے ٹیکس ادا کرنے کے لیے یہاں رُکا کرتے تھے۔

1726ءمیں ملتان کے گورنر نواب حیات اللہ خان نے بانی ریاست نواب صادق محمد خان اول کو چُودری کا علاقہ بطور جاگیر عطا کیا۔ اور انہوں نے یہاں سے چار میل کے فاصلے پر ریاست کے پہلے شہر الہٰ آباد کی بنیاد رکھی۔ 1880ءمیں جب نارتھ ویسٹرن ریلوے لائن تعمیر ہوئی۔

تو یہاں دریائے سندھ کے متروکہ نشیب جسے مقامی طور پر "ترکڑی ڈھورہ”کہا جاتا تھا، کے بائیں کنارے سے ذرہ ہٹ کر ریلوے لائن تعمیر کی گئی اور ریلوے اسٹیشن کا نام چُودری رکھا گیا ۔ 1949ءمیں پاکستان کے پہلے وزیر اعظم نواب زادہ لیاقت علی خان نے اس علاقہ کا دورہ کیا اور یہاں جلسہ سے بھی خطاب کیا۔

 ء 1952میں سابق گورنر پنجاب نواب مشتاق احمد گورمانی نے نواب زادہ لیاقت علی خان کی یاد میں اس قصبہ کا نام لیاقت پور رکھ دیا اور وہ دفاتر جو یہاں سے تین چار میل کے فاصلے پر الہٰ آباد کے قصبے میں کام کررہے تھے انہیں لیاقت پور میں منتقل کر دیا گیا۔

اس قصبے کی تعمیر کے لیے ٹاون پلاننگ کی گئی تھی۔ 1972ءکی مردم شماری میں یہاں کی آبادی 6,699 نفوس تھی۔ جبکہ 1981ءکی مردم شماری کے میں اس کی آبادی 15,119 نفوس تھی۔ اب 1998ءکی مردم شماری کے مطابق 32,858 اورافراد پر مشتمل ہے۔ جس میں 16,861 مرد اور 15,997 خواتین ہیں۔ 2008 ءمیں 3.1 فیصد اضافہ کے فارمولہ کے ساتھ 48006 افراد مقیم ہیں ۔

#Liaquatpur Rahim Yar khan

Back to top button
Translate »