ادب کے لحاظ سے

 ضلع رحیم یار خان کی موجودہ ادبی شخصیات او ر انکی تصنیفات

تحصیل رحیم یار خان کے شاعر

  عبدالعز یز اختر ایڈووکیٹ (جنبش لب ، دامن احساس ) ، خلیق ملتانی (دولت احساس ) ، ارمان عثمانی ، حمید نقوی (مسافتیں کیا کیا ، نوک نیزہ ) ، ندیم نیازی (نکہت گل ، چشم بینا ، وما ارسلنک الہ رحمتہ اللعالمین ، حریم حرف ، خوشبو ، رنگ ، لہو ، پرل آف دی ایسٹ ، چراغ راہ ) ارشد جاوید ، مولانا بشیر احمد حسیم (پنجابی شاعر : گلشن توحید ، جنگ دا نچوڑ ، مسدس حسیم ، صوادی ) عاشق قریشی (سوز عشق ، دھواں دھواں ، نقش کف پا ، منزل ، سفر مسافر ،گرد ملال ) نجم الحسن نجمی ، منظور محسن (خیال کے جگنو) ، کبیر اطہر (منظر اک خواب کا سا ہے )منان قدیر منان (مجھے تم سے محبت ہے ، تمہیں کیسے منائوں ، کب آئو گے ) ایوب ندیم (نقاد و کالم نگار ) عبدالمالک شاکر ، مختار احمد عزمی ، خالد محمود ، رفعت شیخ ، ش الف شاہد ، بشیر عاجز ، حسن المرتضیٰ خاور ،( متاع کارواں ،خون کے آنسو) زاہد اختر شاہین ، حکیم شیر محمد خیال ، عبدالقادر آزاد، منیر عابد (دشت دل ، تلاش گل ) ، سید محمد قادر ، فرحت نواز ، سید فہیم الدین ہاشمی (ہزل در غزل) ہدائت کاشف ، خالد جاوید ، جاوید حمید خلجی امین بابر ، عبدالخالق مستانہ ، اخلاق احمدمزاری ، خورشید بخاری ،تحسین بخاری ، احمد علی گورایا ، شہباز نیر ،  ندا کلیم رضوی ،عبد الحمید صابری ،عبد الرزاق پارس ،پروفیسر افضل بیگ ،آصف علی منصور ،عبد ا  لصبور ،مرزا فیصل ،شامل ہیں ۔ جبکہ  دیہی علاقوں اور مقامی زبانوں میں شاعروں میں گل محمد ڈکھی ملا نہ(پیار دی گولی)، منظوراحمد آرائیں ، خواجہ ممدیار فریدی ، الہی بخش احسن فریدی نریجہ ،  ذوالقرنین ، غلام مصطفٰی ،  نذیر احمد سلطانپوری،سید مقصود شاہ مقصود ، حافظ مشتاق احمد مشتاق ، بابا صدیق ناز سجادہ نشین،احسن فقیر ،گل محمد گل  ، گل محمد شاطر (چھاںدی گول) ، دلشاد سلطان پوری ، سیدساجد راہی ،ایوب عاصم چانڈیہ ، قاری غلام صدیق ، سید غلام اکبر شاہ  ، حافظ مشتاق احمد مشتاق،محمد اقبال ثاقب ، محمد اکرم فریدی (چشت نگر باراںماہ،غلامی شیخ دی ، شان محبوب، سی حرفی عشق ،سہ حرفی حضرت حلیمہ ؓ، سی حرفی تصوف ، اکرم فریدی نمبر ، صدائے اکرم ، قصہ زمانے داحال ، کامل پیردی گل )، عبدالحمید سفری (غم دی کہانیُ(۳ایڈیشن)،غم دی کہانی، نعتاںتے کافیاں ،دل دیاںحواڑاں،دی لوک ماندری، قصہ امام شاہؒ(۲ایڈیشن)،دکھی ماہیا، یاداں دیاںکلیاں ،پنجابی گیت(مکمل کتاب)، قصہ لاہور، قصہ رحیم یارخان،بدلی رت بہاراںدی، نقش پا(۲ایڈیشن)،دکھی سی حرفی اللہ دتہ، دکھی سی حرفی عبدالحمید سفری،دکھاں دی پٹاری ، معاشرے دی سچی کہانی ،پڑھاکی ، انصاری (۲ایڈیشن)، متراں دے خط، دکھاںدا سفر ، قصہ کاظم شاہ خان،سرائیکی پنجابی ادبی سانجھی مکدم(۲ایڈیشن))، استاد اصغر علی کوثر (قصہ حضرت ابراہیم ؑ، قربانی حضرت اسمعٰیل ؑ، ظلمدی حد ، دھیاں نمانیاں (مکمل کتاب)، سی حرفی باراںماہ (وچھوڑا)، سی حرفی باراں ماہ (وچھوڑآ روح بت دا)، سی حرفی بیعت نامہ (مرشد پاک)،شجرہ شریف گیلانی قادری ، ظلم دی داستان)، خدا بخش ثاقب ڈاہرثاقب دے ڈوہڑے، شجرہ شریف گیلانی قادری ، پیر علامہ شفقت منظور فاضلی (بانگ درا، بال عزازیل )، بابا محمد صدیق ناز(چمکدے موتی )  حاکم علی حاکم سنجر پوری،محمد سلیم آزاد ، امداد اللہ امداد، عباس ملنگی،سید اختر حسین شاہ جالندھری ، غلام مصطفی قمر  ، باسط علی باسط  ، یادش منصور ، محمد افتخار دانش  ، اللہ دتہ زاہد،دلشاد سلطان پوری ، حافظ غلام صدیق (عقیدت دے پھل)، مہر علی مہر، غلام مصطفی تبسم ، واحد بخش واحد شامل ہیں

نثر نگار /ادیب

ڈاکٹر محمد سلیم ملک (لبید بہاولپوری ، جھلار (شعبہ سرائیکی کے نصاب میں شامل ہے ) ڈاکٹر امتیاز علی تاج شخصیت و فن )، پرویز صادق(محقق ،آرکیالوجسٹ اور افسانہ نگار) ، عظیم اشرف (روشن فکر ادیب اور محقق ) غلام سرور صدیقی ، عبدالعزیز جاوید ، ڈاکٹر عبدالخالق ،ثناء اللہ چیمہ (نیا مالک ) عبدالجلیل بھٹی (تاریخ سے انٹرویو ، شبلی کا نظریہ ء تاریخ ) سعید احمد سعید ( تاریخ و تعارف رحیم یار خان ، رحیم یار خان کی سیاسی تاریخ) صرف سرائیکی نثر لکھنے والوں میں سراج سانول ( ماہر لسانیات ۔ سرائیکی زبان کا قاعدہ بنایا ہے اور لغت تیار کررہے تھے )سید خلیل بخاری، محمد علی پٹواری (لائبریری )،مقبول احمد دھریجہ ، عبدالرب فاروقی ، اشرف پیرجی، ملک محمد اکبر اور منظور احمد اعوان کے نام قابل ذکر ہیں۔

تحصیل خان پور

شاعر

محسن خانپوری (دیوان ریختی عرف رنگیلی بیگم ، خواب سرشار ، مثنوی قہر عشق ) عبدالرحمان آزاد ، آسی خانپوری (موسم یہ خزاں جیسا، انگیارے ، شرار سنگ ، روشنی رنگ رنگیلڑی (سرائیکی ) لوئے لوئے (پنجابی ) ) حفیظ شاہد (سفر روشنی کا ، چراغ حرف ، مہتاب غزل ) ، گلزار نادم صابری (شاہنامہ حسین ) ، عارف عزیزی (چشم و دل )، اسد حسین ازل (دشت انا) قیس فریدی (ارداس ، نمرد ، آمشام ، چند سرائیکی اصطلاحات و مترادفات ، پرکھرا) حیدر قریشی ، رفیق راشد ، مجاہد جتوئی(جیسا میں نے سوچا ) ، امان اللہ ارشد۔ اشراق بالاچ داس ، مولانا نور احمد فریدی/خواجہ محمد اعظم (دیوان احمدی)، محمد نواز خوشتر (دیوان خوشتر) ، عابد سمیجہ ، ساجد سولنگی(راہ  دے  رولے)، عبدالکریم دلذوق ،محمد یاربیرنگ، کریم بخش گلفام،محمد اشرف دھریجہ،محمد اکبر قادری ، حاجی غلام محمد کھوسہ ،حافظ فیض الہٰی کھوسہ ،شہزاد اختر آرائیں ،غلام حیدر،خلیل احمد عاقر

ادیب و نثر نگار

            مرید حسین راز جتوئی ، محمد اجمل بھٹی (ادیب و نقاد ) خورشید احمد ، سید بیتاب ، انیس دین پوری ، اختر شاکر ، حبیب اللہ خیال ، ظفر اقبال (آئین سے انحراف ) جواد تھیہیم۔ ظہور دھریجہ (جھوک)

تحصیل صادق آباد

 غلام محمد (پنجابی شاعر ) ، میر حسان الحیدری ، گوہر ملسیانی (مظہر نور ،عصر حاضر کے نعت گو ، چاند ، ہوا اور میں ،جادہ شوق) بشیر بیتاب (محراب سخن ، بیتی رت کا حساب ، ڈونگھے زخم ہجر دے ) ممتاز حیدر ڈاہر (وہندے نیر ، اندارے دی رات ) توقیر حسین توقیر ، شاہد عباسی (شاخ انا )حکیم احمد حسن ، شہبازآفاقی، رحمت علی شہداء ، اختر جعفر پوری ، ہدائت رضوی ، افضل درویش ، انور ہاشمی۔ڈاکٹر کبیر اطہر ، پروفیسر صغیر احمد صضیر ، رانا بخت فقیر (دیوان بخت ) ، خواجہ محمد شریف،سئیں داد فقیر،  ڈاکٹر ایاز احمد ایاز ، سید مٹھو شاہ صاحب مٹھن، باسط فریدی ، خدابخش ، کریم بخش خان ،نور احمد درزی ،  میر محمد، محمد ایوب عاصم،  مولوی محمد رمضان

ادیب و نثر نگار

انیس جیلانی (مہاندرا ڈیکھنس ،آدمی غنیمت ہے )ممتاز حیدر ڈاہر (، پکھی واس ، کشکول وچ سمندر ، میڈی دھرتی میڈے لوگ) ، اشرف شکیل ، جاویداحسان چانڈیو( خواجہ فریدکی شاعری کا سماجی و لسانی جائزہ اور سرائیکی لسانیات ) محمد دین جوہر ، طارق منصور ، سید ابوالبشر جیلانی (بکھ دا مخول ۔ انشائیہ بشیر احمد دیوانہ ، رفیق ساحل (بڑ دا ساحل ) محمد افضل جام ، راہی گبول (جگر دے پھٹ ، افسانہ مٹھڑے نیر طنز و مزاح  ،

لیاقت پور

شاعر

عبداللطیف دانش ، سید ضیاء الدین نعیم ، نواز فانی ، جام نواز ، بابا جگ (پنجابی شاعر) ، اعجازخاور ضیائی ،پرویز عامر ، افضال انجم ، منیر انور، رفیق صدیقی ، حسین ریاض،نصر اللہ خان ناصر ( اجرک (سرائیکی شاعری ) ، تیری ذات سے تیرے ہجر تک ) صالح الہ آبادی ، پر سوز بخاری ، صوفی دلچسپ (بزرگ شاعر)، نجیب اللہ نازش، ملک حبیب مڑل ،بخت علی جگر، حافظ بشیر احمد نوکر (عشق دے دھک)، مولوی عبداللہ پردرد(خیال پر درد)، سید جہان شاہ مجروج (بحر الفراق)، دلاور خان پر فیض عباسی (منٹھار ڈوھڑے)، مخدوم محمد رفیع شاغل صدیقی(قلندر تے کشالے)، عبدالرشید دردی(عشق رسول)محمد بخش شاطر (شاطر نمانڑاں)، مولوی غلام رسول وفا ( دیوان وفا)، مولانا حاجی شاہ صاحب (دیوان فائق)، صوفی فیض محمد دلچسپ (ٹھنڈھڑے ساہ)خیر محمد فانی (وسمیا ڈیوا)، مولوی یار محمد یارن(دیوان یارن)، گل بہا ر گل ،محمد نواز شیدانی،مولوی غلام رسول وفا، خواجہ نور احمد فرید، صالح محمد صالح ، جام ریاض احمد ریاض،  محمد احمد عقیل،      مصطفی عزیز بلوچ ، قاضی اللہ داد،پیر احمد یار ، عابد سمیجہ مولوی شیخ ولی،امیر بخش دانش ،اللہ ڈتہ ثاقب ساہی،پیر زادہ نجم الدین ثاقب  ،محمد صادق دلنیاز، یوسف حسین ،منظور حسین ، خورشید احمد،عبدالرحمٰن حاجی(زمانے داحال)،محمد اشرف گجرانی(نالائق پتر)

 نثر نگار اورادیب

            نصر اللہ خان ناصر ( سرائیکی شاعری دا ارتقاء ) اختر الہ آبادی ، امیر بخش دانش ، امیر عباس امیر ، ابو طاہر بشیر ، پرسوز بخاری ،حبیب اللہ اویسی ، شباب ملک، عبدالرشید انجم ،غلام شبیرارشد۔

نوٹ: (شعراء کرام کی فہرست مرتب کرنے میں نعت خوان غلام شبیر کھوکھر ، اقبال ثاقب ، منان قدیر منان، ہدائت کاشف نے معاونت کی)

ضلع رحیم یار خان کی ادبی محافل /تنظیمیں

٭ رحیم یار خان کی پہلی ادبی تنظیم ” بزم ادب 1936 ” میں بہاولپور سے آنے والے ایک شاعر عبدالحمید ارشد کی تحریک پر بنائی گئی ۔
٭ 1954 میں خانپور میں عبدالرحمن آزاد کی زیر سرپرستی ” کاروان ادب ” قائم ہوئی ، 1956 میں انجمن فروغ اردو اور انجمن ترقی تعلیم کے قیام سے خان پورمیں علمی و ادبی فضاء استوار ہوئی ۔
٭ 60ء کی دہائی میں محمد حسین کانجو کی جدوجہد سے ادبی تنظیم رفیق الطلبہ نے بہت کام کیا ۔
٭ 1960 میں کوٹ سمابہ میں "بزم عیش” حکیم شیر محمد خیال اور رائو مستجاب علی نے قائم کی
٭ 1960 میں ہی رحیم یارخان کے گورنمنٹ کالج میں "حلقہ ارباب ادب ” کی سرگرمیاں شروع ہوئیں ۔
٭ 1967 ء میں بزم فکر و نظر نے رحیم یار خان میں متضاد نظریات کے حامل لوگوں کو جمع کیا ۔
٭ 1967 میں ہی گوہر ملسیانی نے صادق آباد میں "بزم اقبال” قائم کی
٭ 1971میں لیاقت پور میں سید ضیاء الدین نعیم ،شوکت ہمایوں نے دیگر دوستوں کے ساتھ مل کر "انجمن فروغ اردو”کی طرح بیل ڈالی (آج کل لیاقت پور میں یہی دوست ” بزم احساس ” کے نام سے اپنی سرگرمیوں کو منظم کئے ہوئے ہیں )
٭ 1975تا1990کے دوران بزم یاران خلیق، انجمن فروغ اردو اور بزم فیض نے ادبی سرگرمیوں میں باقاعدگی اور استقلال کی نئی طرح ڈالی۔
٭ 1990 سے بزم فیض ، بزم شاہین یا بزم اقبال اور پنجابی ادبی بیٹھک کی محافل کا ذکر ملتا ہے۔
٭ بیسویں صدی کی آخری دہائی میں بزم فرید کا قیام عمل میں آیا جو سرائیکی زبان کی ترقی و ترویج کے لئے آج بھی کوشاں ہے۔
٭ 2002ء میں کچھ دوستوں نے مل کر ایک ادبی و ثقافتی تنظیم امکان قائم کی ہے۔
٭ 2008ء میں ثقافتی ورثہ کے تحفظ کے لیے پتن منارہ ویلفیئر موومنٹ کا قیام بھی عمل میں آیااور سوشل ویلفئیرسے رجسٹرڈ بھی ہوئی ہے ۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Translate »
Close
Close