fbpx

پیپلزپارٹی سٹی خان پور کی تنظیم نو کے سلسلے میں مشاورتی اجلاس

رحیم یار خان پاکستان پیپلز پارٹی کے ضلعی صدر سردار حبیب الرحمن خان کی رہائش گاہ پر ان کی زیر صدارت پاکستان پیپلزپارٹی سٹی خان پور کی تنظیم نو کے سلسلے میں مشاورتی اجلاس منعقد ہوا۔

اس اجلاس میں سردار حبیب الرحمن خان گوپانگ، مرشد سعید ناصر مولانا عبدالرحمن صدیق دین پوری ،میاں محمد اسلم ایڈووکیٹ ،سردار الیاس خان لولاءایڈووکیٹ ،میاں ربنواز قریشی ،میاں شانواز قریشی ،بابر دھاریجہ، راشد بھٹا ،ممتاز خان کورائی ،ر،ئیس اصغر کھوکھر ،اور سلیم گورمانی نے شرکت کی۔

اجلاس میں خانپور سٹی کی تنظیم سازی کے سلسلہ میں سیر حاصل بحث کی گئی اور فوری طور پر مضبوط تنظیم سازی کی ضرورت کو اجاگر کیا گیا۔ اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ خانپور سے تعلق رکھنے والے درج بالا افراد محرم کے بعد فوری طور پر سٹی صدر کے لیے متفقہ نام ضلعی تنظیم کو دیں گے۔

اگر سٹی خان پور سے تعلق رکھنے والے یہ افراد کسی متفقہ کا فیصلے پر نہ پہنچ سکے توضلعی تنظیم غور و خوض کے بعد از خود سٹی صدر نامزد کرے گی اور یہ فیصلہ سب کو منظور ہوگا۔اجلاس میں صدر جنوبی پنجاب مخدوم سید احمد محمود کی قیادت پر مکمل اعتماد کا اظہار کیا گیا اور پارٹی کی تعمیر و ترقی کے لئے ان کی کوششوں کو سراہا گیا ضلعی صدر سردار حبیب الرحمن خان اپنے خطاب میں کہا کہ کارکنوں کی عزت نفس کو بحال کرنا میرا مشن ہے پارٹی میں تمام فیصلے اتفاق رائے سے کارکنوں کی باہمی مشاورت سے کیے جائیں گے۔

مرشدسعید ناصر نے اس بات پر زور دیا کہ کارکن اور عہدیداران اپنی ذات سے بالاتر ہوکر پارٹی کی تنظیم اور نظریات کو مقدم رکھیں ۔اجلاس کے آخر میں سابق صدر جناب آصف علی زرداری کی صحت یابی اور پارٹی میں اتفاق و اتحاد اد اور ملک پاکستان کی خیر وسلامتی کیلئے دعا کی گئی اور مطالبہ کیا گیا کہ فورا سیاسی انتقام ختم کرکے آصف علی زرداری کو باعزت بری کیا جائے۔

حکمرانوں کو خبردار کیا گیا کہ اگر جیل میں آصف علی زرداری کو کچھ ہوگیا تو پھر حالات کی تمام تر ذمہ داری حکمرانوں پر ہوگی۔اجلاس میں موٹروے کو فوری طور پر کھولنے ،سرائیکی خطے کے عوام کے لئے الگ صوبے کے فوری قیام کافی مطالبہ کیا گیا۔اجلاس میں کشمیر کے مسئلے پر حکمرانوں کے غیر سنجیدہ رویے کی مذمت کی گئی اور اس بات کا اعادہ کیا گیا کہ کشمیر کا سودا کسی صورت میں قبول نہیں کیا جائے گا۔

اجلاس میں یہ بھی مطالبہ کیا گیا کہ ناکام خارجہ پالیسی کی بنا پرسلیکٹڈ حکمران فوری طور پر مستعفی ہو جائیں۔ملک میں منصفانہ اور غیر جانبدارانہ الیکشن کرا کر اقتدار حقیقی نمائندوں کے سپرد کیا جائے۔

 

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Translate »