پولیس تھانہ ائیر پورٹ نےعدالتی احکامات کی دھجیاں اڑا دیں

رحیم یار خان : پولیس تھانہ ائیر پورٹ کی نگرانی میں عدالتی احکامات کی کھلی خلاف ورزی،

کاٹن فیکٹری لیز معاہدہ ختم ہونے کے باوجود فیکٹری میں موجود لاکھوں روپے مالیت کا میٹریل ٹرالر پر لوڈ کرواکر باہر نکلوادیا،

انصاف کی اپیل لے کر جانے والے متاثرہ مالک کو تھانہ میں بٹھائے رکھا۔

 عبدالرشید قیوم،محمد شفیق نے عباسیہ ٹاؤن کے رہائشی محمدافضل، محمد سرور اور راشد حسین سے مقامی کاٹن جنرز اینڈ اآئل ملز ابوظہبی روڈ معاہد کیا جس کے تحت محمد افضل نے دیگر حصہ داران سے لیز پر حاصل کرلی جس کی معیاد مدت 31مارچ 2020تھی اور اس تاریخ کو فیکٹری ہرصورت خالی کرنی تھی اور محکمانہ واجبات بھی کلیئر کرنے تھے جس کے بعد تمام فریقین باہمی رضامندی سے اپنے اپنے حصہ کے مطابق اپنی ملکیت کو فروخت کرنے کے مجاز ہوتے،

یہ بھی طے پایا کہ فریق دوم محمد افضل مقررہ تاریخ تک فیکٹری خالی نہ کی تو 10لاکھ روپے دیگر فریقین کو اداکرنے کا پابند ہوگا

مگر عبدالرشید قیوم کا کہنا ہے کہ معیاد مدت ختم ہونے کے باجوود محمد افضل نے فیکٹری خالی نہ کی بلکہ فیکٹری کا ٹرانسفارمر بھی جعل سازی سے اپنے نام منتقل کرالیا ہے۔

جس پر حکم امتناعی حاصل کیا تھا جس کی خلاف ورزی کی گئی ہے اور پولیس تھانہ ائیر پورٹ کو بھی بھاری رشوت دیکر فیکٹری سے مال کے ٹرالر بھربھر کر باہر نکالے جارہے ہیں۔

جب پولیس تھانہ ائیرپورٹ کے ایس ایچ او حسین نظامی کے پاس گیا تو انہوں نے کاروائی کی بجائے اسے اکٹھ کرانے اور مختلف بہانوں سے تھانہ بٹھائے رکھا اور باقی نفری فیکٹری پہنچ کر محمد افضل کا مال اپنی نگرانی میں باہر نکلواتی رہی۔

عبدالرشید قیوم نے مطالبہ کیاکہ معاہدہ کی خلاف ورزی کرنے پر محمد افضل کے خلاف کاروائی عمل میں لائی جائے۔

رابطہ کرنے پر ایس ایچ او تھانہ ائیر پورٹ حسن نظامی نے موقف اختیار کیا کہ فریقین کے درمیان جو بھی معاملہ ہے وہ عدالت میں زیر سماعت ہے جس کی وجہ سے پولیس اس معاملے میں کوئی کردار ادا کرنے سے قاصر ہے،نقص امن کے پیش نظر پولیس مذکورہ موقع پر موجود رہی، کسی بھی فریق کی طرفداری کا الزام بے بنیاد ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Translate »
Close
Close