fbpx

رحیم یارخان میں جعلی پولیس مقابلہ،ورثا کا احتجاج

رحیم یارخان: مبینہ پولیس مقابلہ کے دوران زخمی حالت میں گرفتارہونے والے لنڈ گینگ کے ملزم کے ورثاء کا بھونگ پولیس کے خلاف احتجاج پولیس مقابلے کو جعلی قراردے دیا،

پولیس نے 17فروری کو صادق آباد عدالت میں پیشی کے بعد گرفتارکیا تھا ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر جعلی پولیس مقابلے کی از خود تحقیقات کرے جرم ثابت ہونے پر پورے خاندان کو جیل میں ڈال دیا جائے ورثاء کا مطالبہ

جمالدین والی کے نزدیک پولیس مقابلے کے دوران گرفتارہونے والے شیر علی جس کا تعلق لنڈ گینگ سے بتایا جاتا ہے کے ساتھیوں نے گشت پر موجود پولیس موبائل پر فائرنگ کی تھی پولیس کی جوابی فائرنگ کے نتیجہ میں شیر علی کو زخمی حالت میں گرفتارکرنا ظاہر کیا تھا تاہم گزشتہ روز شیر علی کے ورثاء نے موضع گلشن منور احمد میں بھونگ پولیس کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے پولیس مقابلے کو جعلی قرار دیا اس موقع پر ورثاء نے میڈیا کو بتایا کہ پولیس تھانہ بھونگ نے شیر علی کو 17فروری کے روزصادق آباد کی عدالت میں پیشی بھگتنے کے دوران گھر واپس آنے کے دوران گرفتارکیا تھا۔

جس کے اغواء کیے جانے پر پولیس پکار 15 پر پولیس کو اطلاع بھی دی گئی تھی جبکہ پولیس کی جانب سے شیر علی کی رہائی کے عوض 50ہزارروپے کی رشوت بھی وصول کی گئی تھی۔

رشوت کی مزید ڈیمانڈ پوری نہ کرنے پر پولیس نے جعلی پولیس مقابلہ ظاہر کرتے ہوئے شیر علی کی گرفتار ی ظاہر کی۔

اس موقع پر ورثاء نے مزید بتایا کہ اس سے قبل بھی ان کے خاندان کے خلاف پولیس کی جانب سے بے بنیاد مقدمات اندراج کیے گئے ہیں اور پولیس نے ان کے خاندان پر زمین تنگ کردی ہے۔

پولیس کی جانب سے جب بھی ہمارے خاندان کے شخص کو حراست میں لیا گیا تو انہوں نے بیلف کے ذریعے حراست میں لیے جانے والے خاندان کے شخص کو برآمد کروانے کی کوشش کی جس پر پولیس ان کی دشمن بن چکی ہے ورثاء نے ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر سے مطالبہ کیا کہ وہ از خود تحقیقات کرے جرم ثابت ہونے پران کے پورے خاندان کو جیل میں ڈال دیا جائے۔

اس موقع پر ترجمان پولیس نے میڈیا کو بتایا کہ گرفتار ملزم شیر علی کے ورثاء کے الزامات بے بنیاد ہیں شیر علی کے خلاف 15سے زائد چوری، ڈکیتی کے مقدمات اندراج ہیں۔ ملزم شیر علی نے 27فروری کے روزاپنے ساتھیوں کے ہمراہ پولیس موبائل پر حملہ کیا تھا جوابی فائرنگ پر زخمی حالت میں گرفتارکیا گیا جبکہ گرفتار ملزم شیر علی نے یکم جنوری کو تھانہ بھونگ کی حدود میں واردات کے دوران فائر مارکر شخص کو زخمی بھی کیا تھا جس کا مقدمہ بھی درج ہے اور ملزم کی شناخت پریڈ کی گئی ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Translate »