fbpx

شیخ زید ہسپتال یونٹ ٹو کے قیام کے لئے انتظامیہ کو ہدایت جاری کر دی ،یاسمین راشد

کرپشن ، اقرباء پروری اور فرد واحد کے فیصلوں نے سستی شہرت تو حاصل کی مگر عوام کے لئے کچھ نہیں کیا

صوبائی وزیر صحت پنجاب محترمہ یاسمین راشد نے کہا ہے کہ پنجاب کے سابقہ حکمرانوں نے شاہانہ انداز سے حکومت چلا کر تمام ادارے تباہ و برباد کر دیئے، کرپشن ، اقرباء پروری اور فرد واحد کے فیصلوں نے سستی شہرت تو حاصل کی مگر عوام کے لئے کچھ نہیں کیا،

وزیر اعظم عمران خان کا ویژن ہے کہ ملک سے کرپشن کا خاتمہ کرتے ہوئے اداروں کو مضبوط اور میرٹ کی پالیسی کو پروان چڑھایا جائے، وزیر اعظم کا ویژن ہے کہ ملک کے ہر شہری کو جدید اور معیاری طبی سہولیات اس کی دہلیز پر میسر ہو جس کے لئے ترجیحی بنیادوں پر اقدامات کئے جا رہے ہیں.

ایسے خاندان جس کے سربراہ کی یومیہ آمد ن دو ڈالر سے کم ہے انہیں ہیلتھ انشورنس کارڈ جاری کئے جا رہے ہیں جس سے ہیلتھ انشورنس کارڈ ہولڈر خاندان7لاکھ20ہزار روپے تک اپنے علاج معالجہ پر خرچ کر سکتا ہے۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے ڈسٹرکٹ سرکٹ ہاؤس میں ذرائع ابلاغ کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

صوبائی وزیر نے کہا کہ پہلے مرحلہ میں وزیر اعظم پاکستان عمران خان اور وزیر اعلیٰ پنجاب عثمان بزاد ضلع راجن پور سے ہیلتھ انشورنس کارڈ کا اجراء کر رہے ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ30مارچ تک8لاکھ کارڈ مستحق خاندانوں میں تقسیم کئے جائیں گے جبکہ 2019ء تک پنجاب کے36اضلاع میں92لاکھ ہیلتھ انشورنس کارڈ تقسیم کئے جائیں گےجس سے 3کروڑ50لاکھ افراد مستفید ہوں گے۔

 ان کارڈ ہولڈرز کو نہ صرف صوبہ کے معیاری ہسپتالوں میں علاج کی سہولت میسر ہو گی بلکہ انہیں انہیں روزانہ اجرت اور کارڈ ہولڈر خاندان میں فوتگی کی صورت میں تدفین کے اخراجات بھی فراہم کئے جائیں گے۔انہوں نے کہا کہ چھ ماہ میں محکمہ صحت کی بہتری کے لئے عملی اقدامات کئے 6ہزار800ڈاکٹرز کو میرٹ پر پبلک سروس کمیشن کے تحت بھرتی کیا گیا ،580فارماسسٹ، 15ہزار اسامیاں سکیل5تا15تک کی جا رہی ہیں جبکہ نرسز کو کمی کو بھی پورا کیا جا رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ محکمہ صحت سے سفارش کلچر کو ختم کرکے میرٹ کی پالیسی پر رواں کیا جا رہا ہے۔ماں اور بچے کی صحت کے حوالہ سے خصوصی اقدامات کئے جا رہے ہیں ضلع راجن پور میں250بیڈ کا ہسپتال بنایا جا رہا ہے جبکہ لیہ، بہاولنگر، میانوالی اور اٹک میں بھی ہسپتال قائم کئے جائیں گے،

سابقہ حکمرانوں سے شعبہ صحت پر کوئی توجہ نہیں دی موجودہ حکومت آٹھ پسماندہ اضلاع راجن پور، لودھراں، ڈی جی خان، جھنگ، چنیوٹ، قصور، میانوالی اور اٹک کے ہسپتالوں کو اپ گریڈ کر رہی ہے۔ پانچ سالوں میں صوبہ بھر کے بنیادی مراکز صحت کو 24گھنٹے فعال رکھنے کی حکمت عملی مرتب کر لی اور چھ ماہ میں جس تیز رفتاری سے محکمہ صحت میں افرادی قوت کو پورا کیا جا رہا ہے ماضی میں اس کی کوئی مثال نہیں آج ہر بنیادی مرکز صحت میں ڈاکٹرز موجود ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ایم ٹی آئی ایکٹ کو اسمبلی سے منظور کرایا جا رہا ہے جس کے تحت ہسپتالوں میں ہی ڈاکٹرز کو پرائیویٹ پریکٹس کی سہولت فراہم کی جائے گی جہاں پر وہ حکومت کی طے کردہ فیسوں پر عوام کا پرائیویٹ علاج کریں گے۔

 سابقہ حکومت نے ہیلتھ کارڈ تو جاری کئے مگر اس کے لئے کوئی بجٹ نہیں رکھا 3ارب20کروڑ روپے کی ادائیگیاں سابق حکومت کی لاپراہی کے باعث کی گئی ہیں۔انہوں نے کہا کہ ضلع رحیم یا رخان ایک بڑا ضلع میں اور بلوچستان، سندھ سمیت اندرون پنجاب کے مریض اس ضلع میں دستیاب ہیلتھ سہولیات سے مستفید ہو رہے ہیں۔

انہوں نے اعلان کیا کہ شیخ زید ہسپتال یونٹ ٹو کے قیام کے لئے انتظامیہ کو ہدایت کی ہے کہ وہ منصوبے کا پی سی ون فوری تیار کریں80ایکڑ اراضی دستیاب ہے جس پر شیخ زید ہسپتال یونٹ ٹو بنایا جائے گا

جبکہ ڈسٹرکٹ ہیلتھ کواٹر ہسپتال بھی اس ضلع کے لئے ضروری ہے جس کے لئے کسی بھی اہم تحصیل ہیڈ کواٹر ہسپتال کو ڈی ایچ کیو کا درجہ دیکر اپ گریڈ کیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ ڈاکٹرز اپنی بساط سے بڑھ کر کام کر رہے ہیں انہیں مزید سہولیات فراہم کریں گے۔انہوں نے بتایا کہ کتے کاٹے کی ویکسین ملک بھر میں نایاب ہے ،ا نڈیا اور چائنہ ویکسین تیار کرتے ہیں انڈیا نے پاکستان کو ویکسین فراہم کرنے سے انکار کر دیا ہے تاہم ہم نے چائنہ سے فوری طور پر ویکسین منگوائی ہے اور جلد ویکسین کی کمی کو پورا کر لیا جائے گا۔

مرحلہ وار تمام ہسپتالوں کو اپ گریڈ کیا جا رہا ہے افسوسناک امر ہے کہ سابقہ حکمرانوں نے ایک بھی ایسا ہسپتال نہیں بنایا جس میں ان کا علاج ممکن ہو سکے۔صوبائی وزیر صحت ڈاکٹر یاسمین راشد نے شیخ زید ہسپتال اینڈ میڈیکل کالج کا سرپرائز وزٹ کیا ۔

انہوں نے ایمرجنسی، ٹراما، گائنی وارڈ، چلڈرن وارڈز سمیت دیگر شعبوں کا معائنہ کیا اور مریضوں کی عیادت کی ۔اس موقع پر ڈپٹی کمشنر جمیل احمد جمیل، ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر(ریونیو)ڈاکٹر جہانزیب حسین، سی ای ا وہیلتھ اتھارٹی ڈاکٹر مخدوم بشارت حسین ہاشمی، ایم ایس شیخ زید ہسپتال ڈاکٹر غلام ربانی سمیت دیگر حکام بھی ان کے ہمراہ موجود تھے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Translate »
Close
Close