fbpx

سمجھوتہ ایکسپریس کے ملزمان کوبری کرنا قابل مذمت ہے،سردار ظفر خان ترین

rahim yar khan lawyers
رحیم یارخان:سمجھوتہ ایکسپریس کے ملزمان کوبری کرنا قابل مذمت ہے،دہشت گردوں کی رہائی بھارتی نظام انصاف کے منہ پر طمانچہ ہے،بھارتی حکومت ہندوانتہا پسند ی کو فروغ دے رہی ہے بھارت کی اعلیٰ ترین عدالتیں ندوانتہاپسندوں کے خوف اوردباؤ میں ہیں،حکومت بھارت کے اس فیصلے کوعالمی عدالت میں چیلنج کرے اوربھارتی عزائم اورمکروہ کردار کو دنیا کےسامنے بے نقاب کیا جائے ان خیالات کا اظہار سابق صدرڈسٹرکٹ بار سردار ظفرخان ترین ایڈوکیٹ سپریم کورٹ،سابق صدربار محمد فاروق ورند ایڈوکیٹ،سابق جنرل سیکرٹری بار بشارت علی ہندل،مخدوم فہد اقبال،چیئرمین ا ینٹی کرپشن کمیٹی بارسردار فہیم نواز خان،عرفان علی ورند،محمد عدیل چوہدری،سلال اشرف مزاری،ضلعی جنرل سیکرٹری پیپلز لائیرزفورم جام شکیل احمد بورہ،سید غلام مصطفی امجدبخاری،میاں عبدالمجیب ویہا،ضلعی سیکرٹری نشرواشاعت پیپلزلائیرزفورم غلام غوث خان کورائی،محسن اخلاق،چوہدری عدنان اشرف مہاندرہ،سید آفتاب شاہ اوراحمد نقاش خٹک ایڈوکیٹس نے سروے میں اظہار خیال کرتے ہوئے کیا انہوں نے کہا کہ پاکستان پر دہشت گردی کا الزام لگانے والےبھارت کی منافقت دنیا کے سامنے آگئی ہے اس فیصلے سے یہ واضح ہو گیا ہے کہ بھارتی عدالتیں انصاف بانٹنے اورعدل کرنے میں کتنی آزاداورخود مختار ہیں یہ فیصلہ پاکستان کے 43خاندانوں سمیت بھارتی باشندوں کے زخموں پر نمک پاشی کے مترادف ہے جن کے پیارے سمجھوتہ ایکسپریس میں بم دھماکے اوراس کے نتیجے میں لگنے والی آگ کی نذرہوگئے بھارت کا مسلمانوں کے حوالے سے دوہرامعیار عالمی امن کے دعویداروں کیلئے لمحہ فکریہ ہے،مودی حکومت کا یہ فیصلہ انصاف کی عملداری پر بدنما داغ ہے بھارتی سپریم کورٹ نے یہ فیصلہ کرکے انصاف کا قتل کیا ہے بھارتی عدالت نے موقع کی گواہی قبول نہ کر کےانصاف کا قتل کیا ہے بھارتی عدلیہ کا تعصب دنیا کے سامنے اجاگر کرنا ہوگاہمیں اپنے مکاردشمن کو ہر محاذ پر شکست دینے کی ضرورت ہے۔

rahim yar khan lawyers

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Translate »
Close
Close