جرائم وحادثاترحیم یارخان

رحیم یارخان میں 11سالہ لڑکی سے اجتماعی زیادتی کے بعد شرمناک سلوک

رحیم یارخان : ماں کی غیر موجودگی میں 8ملزمان نے ہمسائی کی مدد سے 11سالہ یتیم لڑکی کو اغوا ء کرلیا‘بچی کی حالت غیر ہونے پر فصل کپاس میں درخت کے ساتھ باندھ کر فرار‘مقدمہ درج ،ایک ملزم گرفتار

تھانہ ایئر پورٹ کی حدود یوسف کالونی ٹبہ علی پور کی رہائشی مسرت پروین نے پولیس کو اپنی تحریری شکایت میں بیان کیا کہ وہ سودا سلف لینے کیلئے گھر سے باہر گئی ہوئی تھی کہ اسی دوران3حقیقی بھائیوں اور خاتون سمیت 8ملزمان محمد علی‘محمد شفیق‘مدثر علی‘شبیر احمد‘ عارف علی‘زہراں بی بی اور دو نامعلوم ساتھیوں کی مدد سے اسکی 11سالہ یتیم بیٹی ثناء صدیق کواغواء کرلیا

 علاقہ کی رہائشی ملزمہ زہراں بی بی کے مکان میں لے جا کر 4اوباش ملزمان محمد علی‘محمد شفیق‘مدثر علی اور شبیر احمد نے زبردستی اجتماعی جنسی زیادتی کا نشانہ بنا ڈالا جبکہ زہراں بی بی‘عارف علی اور دو نامعلوم ساتھی باہر پہرہ دیتے رہے۔
ثناء صدیق کی حالت غیر ہونے پر ملزمان نے گناہ چھپانے کی خاطر اسے فصل کپاس میں موجود درخت کیساتھ رسیوں سے باندھ کر فرار ہوگئے‘اہل علاقہ کی اطلاع پر وہ گواہان کے ہمراہ موقع پر پہنچ گئی اور اسکی رسیاں کھول دیں اور طبی امداد کیلئے شیخ زاید ہسپتال رحیم یارخان منتقل کیا۔
ہوش آنے پر اجتماعی زیادتی کا نشانہ بننے والی ثناء صدیق نے ہونے والے واقعہ اور ملزمان کے بارے میں انہیں بتایا جس پر علاقہ میں پنچائیت منعقد کی گئی‘

اجتماعی زیادتی کا مقدمہ
اجتماعی زیادتی کا مقدمہ

پنچائتی فیصلہ نہ ہوا جس پر مسرت پروین ابتدائی میڈیکل رپورٹ اور اپنی بیٹی ثناء صدیق کو ہمراہ لے کر تھانہ پہنچ گئی‘پولیس نے والدہ مسرت پروین کی رپورٹ پر مقدمہ نمبری447/20بجرم 365/B،376-IIت پ کا مقدمہ درج کرکے ایک ملزم محمد شفیق کو گرفتار کرلیا۔

رابطہ کرنے پر تھانہ ائیر پورٹ میں تعینات ایس ایچ او نے بتایا کہ تحقیقات کرنے پر حقائق سامنے لائے جائینگے جبکہ دیگر ملزمان کی گرفتاری کیلئے پولیس چھاپے مارنے میں مصروف ہے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button