fbpx

راشن فراہمی کی نگرانی بیگم عشرت اشرف خود کر رہی ہیں

رحیم یار خان:پاکستان مسلم لیگ(ن) کے مرکزی سینئر رہنما و سابق ڈپٹی سپیکر قومی اسمبلی اور سینیٹر چوہدری محمد جعفر اقبال نے کہا ہے کہ موجودہ حکومت میں فیصلہ سازی کی اہلیت نہیں،

کورونا وائرس کے باعث پیدا ہونے والی صورتحال میں حکومت کے غیر دانشمندانہ فیصلوں نے کورونا سے زیادہ ملک و قوم کو نقصان پہنچایا۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے کورونا لاک ڈاؤن کے باعث معاشی بدحالی کا شکار مستحق خاندانوں میں جعفر آباد پبلک سیکرٹریٹ کی جانب سے رحیم یارخان کے مختلف وارڈز میں راشن فراہم کرنے کی امدادی سرگرمیوں کا جائزہ لیتے ہوئے کیا۔

چوہدری محمد جعفر اقبال نے کہا کہ وفاقی حکومت کورونا وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے اور لاک ڈاؤن کے حوالہ سے قومی سطح پر متفقہ حکمت عملی بنانے میں مکمل ناکام رہی۔وزیر اعظم اپنے کئے گئے فیصلوں پر ہی  شک و شبہ کا شکار ہیں ۔

ایسے حالات میں مسلم لیگ(ن) اپنے قائدین سابق وزیر اعظم میاں محمد نواز شریف اور اپوزیشن لیڈر میاں محمد شہباز شریف کی ہدایت پرمشکلات و مسائل میں گھرے عوام کی مدد کو ان کے گھروں میں پہنچ رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ دیگر اضلاع میں راشن فراہمی کی نگرانی بیگم عشرت اشرف جبکہ سٹی رحیم یار خان حلقہ میں امدادی سرگرمیوں کی نگرانی ایم این اے زیب جعفر اور سابق ایم پی اے محمد عمر جعفر کر رہے ہیں۔

اس موقع پر سابق ایم پی اے چوہدری محمد عمر جعفر نے کہا کہ حکومتی پالیسیوں کے باعث مزدور اور دیہاڑی دار طبقہ ذہنی دباؤ کا شکار ہے،ڈیڑھ ماہ میں حکومت کوئی واضح پالیسی نہ بنا سکی محض جھوٹی تسلیاں دیکر کام چلایا جا رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ (ن) نے اپنے قائدین کی ہدایت پر امدادی سرگرمیاں جاری رکھے ہوئے ہے۔عوام کورونا سے تحفظ کو اپنی مدد آپ کے تحت ممکن بنائیں موجودہ حکومت میں فلاح عامہ کی پالیسیاں بنانے کی صلاحیت نہیں۔

انہوں نے کہا کہ وہ اپنے حلقہ کی عوام کو اس مشکل حالات میں تنہا نہیں چھوڑیں گے اور مسلم لیگ (ن) کے ورکرز گھر گھر جاکر مستحق گھرانوں کو راشن فراہم کر رہے ہیں۔

چوہدری محمد اقبال پبلک سیکرٹریٹ جعفر آباد کی ٹیم نے جناح پارک، گلشن عمر، ٹرسٹ کالونی، عباسیہ ٹاؤن، محلہ چوہدری نیک محمد، یوسی34، نوریوالی، ٹبی لاڑاں سمیت مختلف علاقوں کے مستحق خاندانوں میں راشن بیگ تقسیم کئے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Translate »
Close
Close