رحیم یارخانضلعی انتظامیہ

ریونیو عوامی خدمت کچہری میں شہری کے احتجاج کا معاملہ نیا رخ اختیار کرگیا

رحیم یار خان:وزیر اعلیٰ پنجاب کے حکم پر رحیم یارخان میں ریونیو عوامی خدمت کچہری لگائی گئی جس میں شہری عرفان منصف نے ہاتھ میں چوتے اٹھا کر احتجاج کیا اور الزام عائد کیا کہ اس نے اپنی زمین کے کاغذات کے لئے لاکھوں روپے پٹواری اور دیگر افسران کو دے چکا ہے ،جس پر ترجمان ضلعی انتظامیہ کے مطابق ریونیو عوامی خدمت کچہری میں مبینہ طور پر ریونیو افسر اور پٹواری پر الزام لگانے والے شہری نے ڈپٹی کمشنر، ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر اور اسسٹنٹ کمشنر کی موجودگی کے باوجود ان افسران کو اپنا مسئلہ بیان کرنے کے بجائے پٹواری اور متعلقہ ریونیو افسرسے بات چیت شروع کی اور دوران ریونیو کچہری ایک سائیڈ پر جاکر اچانک ڈرامائی انداز میں احتجاج شروع کر دیا. جس پر ڈپٹی کمشنر نے فوری نوٹس لیتے ہوئے ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر(ریونیو) اور اسسٹنٹ کمشنر رحیم یار خان کو احتجاج کرنے والے شہری کا مسئلہ معلوم کرنے کے لئے بھیجا اور انہیں اپنے پاس بلا کر باعزت انداز میں ان کا مسئلہ سنتے ہوئے ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر(ریونیو) ڈاکٹر جہانزیب حسین لابر کو انکوائری احکامات جاری کرتے ہوئے تین یوم میں رپورٹ طلب کی۔

عرفان منصف کھلی کچہری
عرفان منصف کھلی کچہری

ریونیو عوامی خدمت کچہری میں احتجاج اور ریونیو افسران و عملہ پر رشوت وصول کرنے کا الزام لگانے والے درخواست گزار منصف علی (والد)، عرفان منصف(بیٹا)نے اپنے ساتھ مبینہ طور پر ہونے والی ناانصافی یا رشوت وصولی کی شکایت کسی بھی اعلیٰ فورم پردرج نہیں کرائی اور نہ ہی ان درخواست گزاروں نے کسی متعلقہ افسران یعنی ڈپٹی کمشنر، ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر(ریونیو)، یا اسسٹنٹ کمشنر رحیم یار خان سے ملاقات کرکے انہیں اپنے ساتھ ہونے والے معاملات بارے آگاہ کیا۔

ڈپٹی کمشنر نے اس واقع پر انکوائری کے احکامات جاری کرتے ہوئے واضح ہدایت کی ہے کہ تمام فریقین کی سماعت کرکے میرٹ پر رپورٹ تیار اور کسی دباؤ کو خاطر میں نہ لایا جائے تاکہ جس شخص نے بھی غلط بیانی سے کام لیا ہے اسے قانون کے مطابق سزا دی جا سکے۔انہوں نے کہا کہ رشوت دینا اور رشوت لینا دونوں قابل گرفت جرم ہیں. اگر کسی سرکاری ملازم نے رشوت طلب کی ہے تو اسے بھی سزا ملے گی اور اگرکسی نے محض دباؤ ڈالنے کیلئے ایسا کیا ہے تو ان کے خلاف بھی قانون کے مطابق کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔

دریں اثناء ریونیوعوامی خدمت کچہری میں شبیر ورند اور زاہد بشیر نامی شہریوں نے بھی احتجاج کرنے والے شہری کے خلاف ڈپٹی کمشنر کو اپنی درخواست دی ہے جس کے مطابق دونوں فریقین کے مابین موضع علی اکبر سانگھی میں 1ایکڑ زمین کاتنازع سول کورٹ میں زیر سماعت ہے جس پر عدالت نے حکم امتناعی جاری کیا ہوا ہے، الزام علیہان منصف علی اور عرفان منصف ان کی ملکیتی زمین پر قبضہ کرنا چاہتے ہیں جس کیلئے وہ پٹواری اور ریونیو افسران پر دباؤ ڈال رہے ہیں۔انہوں نے اپنی درخواست میں ڈپٹی کمشنر سے دونوں فریقین کا مسئلہ سن کر میرٹ پر فیصلہ کرنے کی اپیل کی ہے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button