ٹڈی دل کے کنٹرول کیلئے جنگی بنیادوں پر اقدامات شروع

رحیم یار خان وزیر زراعت پنجاب ملک نعمان احمد لنگڑیال نے کہا ہے کہ وزیر اعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار کی زیر صدارت ٹڈی دل کے کنٹرول کے سلسلہ میں متعدد اجلاس منعقد ہوئے۔
ٹڈی دل کے کنٹرول کیلئے اب تک چولستان میں 56ہزارہیکٹیرزسے زیادہ رقبہ پر سپرے کیا جاچکا ہے۔ٹڈی دل کے کنٹرول کیلئے جنگی بنیادوں پر اقدامات جاری ہیں جن کے مثبت نتائج برآمد ہوئے ہیں۔ٹڈی دل کے موسمی حملہ کو موثر طریقہ سے کنٹرول کیا گیاجس سے فصلات کو کوئی نقصان نہیں ہوا۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے رحیم یار خان میں ٹڈی دل کی موجودہ صورت حال کا جائزہ لینے کے سلسلہ میں منعقدہ ایک اعلیٰ سطحی اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا۔اس موقع پر ترقی پسند کاشتکار و سینئر رہنما پاکستان تحریک انصاف جہانگیر خان ترین ، سیکرٹری زراعت پنجاب واصف خورشید،کمشنر بہاولپور ڈویڑن آصف اقبال،ڈپٹی کمشنر رحیم یارخان علی شہزاد،ڈی پی او رحیم یارخان منتظر مہدی،ارکان صوبائی اسمبلی چوہدری آصف مجید، چوہدری مسعود احمد،عامر نواز خان، ایم ڈی چولستان ڈویلپمنٹ اتھارٹی رانا محمد سلیم ،حمیدا? ملک،ڈائریکٹر زراعت توسیع بہاولپور جمشید خالد سندھو،اسسٹنٹ ڈائریکٹر زرعی اطلاعات نوید عصمت کاہلوں سمیت دیگر متعلقہ محکموں کے افسران بھی موجود تھے۔
انہوں نے مزید کہا کہ ابتک تقریباََ تین لاکھ ہیکٹیرزرقبہ کی سرویلنس کی جاچکی ہے۔ڈیپارٹمنٹ آف فیڈرل پلانٹ پروٹیکشن،محکمہ زراعت پنجاب،چولستان ڈویلپمنٹ اتھارٹی،وائلڈ لائف اور لائیو سٹاک کے افسران اور فیلڈ عملہ کو ایف۔ اے۔ او (FAO)کی طرف سے ٹڈی دل کے دوران زندگی ،نقصان ،سرویلنس اور کنٹرول کے متعلق تربیت دی گئی ہے۔
چولستان کے علاقہ کے نمبرداروں اور کاشتکاروں کو بھی ٹڈی دل کنٹرول کی ٹریننگ دی گئی ہے۔محکمہ زراعت کے تحت فصلوں کے تحفظ کے لیے ان علاقوں میں 64سرویلنس ٹیمیں کام کررہی ہیں۔حکومت پنجاب کی بہترین حکمت عملی کی بدولت ٹڈی دل کو پورا سیزن انڈین بارڈ ر کے ساتھ 50تا60کلو میٹر تک محدود رکھا گیا۔وزیر زراعت نے کہا کہ ڈیپارٹمنٹ آف فیڈرل پلانٹ پروٹیکشن،ڈویڑنل/ ضلعی انتطامیہ ،پی ڈی ایم اے،محکمہ زراعت پنجاب،چولستان ڈویلپمنٹ اتھارٹی،وائلڈ لائف اور لائیو سٹاک کی بہترین کوارڈینیشن سے سرویلنس اور کنٹرول کے متعلق کاروائیاں کامیابی سے جاری ہیں۔
53ہزار ہیکٹرز موسمی اور 3ہزارہیکٹیرز سے زائد رقبہ پر دسمبر کے آخری عشرے میں سپرے کیا گیا۔ٹڈی دل کے واپسی کے سفر کو موسمی حالات کی وجہ سے رکاوٹ آئی اور اس کا ر ±خ دوبارہ پنجاب کی طرف ہوگیا جس کیلئے مناسب تیاری کی گئی ہے۔صوبائی وزیر نے مزید کہا کہ رحیم یار خان میں اس وقت 19ٹیمیں کام کررہی ہیں جن کے ذریعے اس ٹڈی کی فصلات پر نشاندہی اور کنٹرول کے لیے اقدامات کیے جارہے ہیں۔
چولستان ڈویلپمنٹ اتھارٹی کا عملہ چولستان کے علاقوں میں ٹڈی دل کے متعلق سپرے کرنے والی ٹیموں کو آگاہ کررہا ہے اور اسکے تدارک کیلئے سپرے کا وافر ذخیرہ رحیم یار خان اور بہاولپور میں مہیا کردیا گیا ہے۔حکومت پنجاب کے تحت ہنگامی بنیادوں پر میلاتھیان خرید کرسپرے کیلئے فراہم کی گئی ہے۔ڈیپارٹمنٹ آف فیڈرل پلانٹ پروٹیکشن کو حکومت پنجاب کی طرف سے فیول و لاجسٹک سپورٹ ،سرویلنس ،رہائش اور پیسٹی سائیڈز وغیر ہ کی فراہمی میں مدد کی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ چولستان سے ملحقہ علاقوں میں کاشتہ فصلوں کو جزوی نقصان پہنچا ہے اس نقصان کے سروے کیلئے ٹیمیں تشکیل دے دی گئی ہیں۔ٹڈی دل کے کنٹرول کیلئے نیشنل ایکشن پلان کی تیاری آخری مراحل میں داخل ہوچکی ہے۔
10سپرے مشین ماو ¿ننٹڈگاڑیوں کیساتھ گراو ¿نڈ آپریشن جاری ہے۔محکمہ زراعت اور ریونیو کے افسران اور عملہ پر مشتمل ٹیمیں نقصان کا سروے کررہی ہیں۔فصلوں کی کاشت کے علاقوں میں محکمہ زراعت کی ٹیمیں مسلسل سرویلنس کررہی ہیں ابتک کی رپورٹ کے مطابق تقریباً02ہزارایکڑ رقبہ پر فصلوں کو جزوی نقصان پہنچا ہے۔ٹڈی دل کے انسداد کے لیے زہریں وافر مقدار میں موجود ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ ڈیزرٹ لوکسٹ کنٹرول ڈیپارٹمنٹ کے آپریشنز کے علاوہ فصلوں اور باغات سے ٹڈی دل کے تدارک کے لیے کاشتکاروں کو زہروں کی فراہمی اور محکمہ کے اہل کاروں کی نگرانی میں سپرے کرائے جارہے ہیں۔ہماری ٹیمیں کاشکاروں کی رہنمائی اور مدد کیلیے ہمہ وقت فیلڈ میں موجود ہیں اور کسی بھی ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کے لیے تیارہیں۔ حالیہ دنوں شدید دھند کی وجہ سے ہوائی آپریشن رکا ہوا ہے جو موسم صاف ہونے پر ضرورت کیمطابق دوبارہ شروع کردیا جائے گا۔
ٹڈی دل کی سائنسی تحقیق اور تدارک کیلئے جامع منصوبہ بندی کی جار ہی ہے تاکہ کاشتکاروں کو اس مسئلہ سے مستقل طور پر محفوظ بنایا جاسکے۔فصلوں کی کاشت کے علاقوں میں ٹڈی دل کے حملہ کے خطرہ اور نقصان کے پیش نظر انتظامات مکمل کر لیے گئے ہیں جس کے لیے حکومت پنجاب کی طرف سے تمام ممکنہ وسائل بروکار لا ئے جا رہے ہیں۔اس موقع پر ترقی پسند کاشتکار و سینئر رہنما پاکستان تحریک انصاف جہانگیر خان ترین نے کہا کہ موجودہ حکومت کی ترجیحات میں زرعی ترقی اور کاشتکاروں کی خوشحالی سرِ فہرست ہے۔
ٹڈی دل کے کنٹرول اور تدارک کے سلسلے میں وفاقی اور صوبائی حکومت شانہ بشانہ کاشتکاروں کے ساتھ کھڑ ے ہیں۔
ٹڈی دل کے موثر کنٹرول کے سلسلے میں جامع اور بروقت حکمت عملی وضع کرنے پر مَیں وزیر زراعت پنجاب ملک نعمان احمد لنگڑیال اور سیکرٹری زراعت پنجاب واصف خورشیدکو خراجِ تحسین پیش کرتا ہوں۔انہوں نے مزید کہا کہ حکومت کی طرف سے فصلات اور چولستان میں سبزے کو ٹڈی دل کے حملہ اور نقصان سے بچانے کے لیے ترجیحاََاقدامات کیے جارہے ہیں۔ ٹڈی دل کے ممکنہ حملہ،نقصان سے بچاو ¿ اور بروقت انسداد کیلئے تمام متعلقہ محکمے باہمی تعاون سے نتیجہ خیز اقدامات کر رہے ہیں۔اس سلسلہ میں رحیم یار خان اوربہاولپور میں 1،1ہوائی جہاز جبکہ گراو ¿نڈ آپریشن کیلئے سپرے مشین ماو ¿ننٹڈگاڑیوں کی تعداد کو بھی دوگنا کیا جارہا ہے۔
انہوں نے کہا کہ وفاقی حکومت کے تعاون سے صوبائی حکومت نے ٹڈی دل کے کنٹرول کے لئے ہوائی جہازوں سے بہاولپور اور رحیم یار خان میں ایریل(Aerial) سپرے کیا۔لوکسٹ کنٹرول کے سلسلہ میں نیشنل ایکشن پلان بنایا جا رہا ہے جس میں ٹڈی دل کے کنٹرول کیلئے سائنسی بنیادوں پر حکمت عملی تیار کی جا رہی ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ آنے والے دنوں میں ٹڈی دل کے کنٹرول کیلئے وضع کردہ نیشنل ایکشن پلان پر موثر عملدرآمد سے وفاقی اور صوبائی حکومت کو ٹڈی دل کے تدارک میں کامیابی حاصل ہو گی۔قبل ازیں ڈپٹی کمشنر علی شہزاد نے صوبائی وزیر زراعت سمیت شرکاءکو ٹڈی دل کی انسدادی کارروائیوں کے حوالہ سے ضلعی انتظامیہ کی جانب سے کئے جانے والے انتظامات بارے بریفگ دی۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Translate »